افغان طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے کہا کہ طالبان شہریوں اور مذہبی علماء پر حملے کی مذمت کرتے ہیں ، کابل میں عید میلاد النبی ﷺ کی تقریب میں ہونے والے خود کش دھماکے میں کوئی طالبان ملوث نہیں ۔ غیر ملکی میڈیا کے مطابق افغان طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے گذشتہ روز افغانستان کے دارالحکومت کابل کے شادی ہال میں عید میلاد النبی ﷺ کی تقریب میں ہونے والے خود کش حملے کی مذمت کرتے ہوئے اس حملے سے لاتعلقی کا اعلان کیا ہے اور کہا ہے کہ اس خود کش حملے میں طالبان کا کوئی فرد ملوث نہیں ہے ۔
واضح ہے کہ طالبان کی جانب سے متعدد حملے سیکیورٹی فورسز اور افغان حکام پر کیے گئے جبکہ دہشت گرد تنظیم داعش کی جانب مذہبی اقلیتوں سمیت مذہبی تقریبات میں حملے کیے جا چکے ہیں جبکہ رواں سال 4 جون کو داعش نے علماء کے ایک اجلاس میں خود کش حملے کیا تھا جس میں تقریباً 7 افراد جاں بحق اور 20 زخمی ہو گئے تھے ۔ یاد رہے کہ گذشتہ روز کابل کے ایک شادی ہال میں ہونے والی مذہبی تقریب میں خوفناک خود کش حملے کے نتیجے میں تقریباً 55 افراد جاں بحق اور 94 سے زائد زخمی ہوگئے تھے جبکہ دوسری طرف افغان صدر اشرف غنی نے آج ملک بھر میں ’’ یوم سیاہ ‘‘ منانے کا اعلان کرتے ہوئے کہا تھا کہ یہ انسانیت پر حملہ ہے ۔
The post کابل میں عید میلاد النبی ﷺ کی تقریب میں ہونے والے خود کش دھماکے میں کون ملوث ہے ، طالبان کا موقف بھی سامنے آگیا appeared first on Urdu News.