امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اپنی ہرزہ سرائیوں سے باز نہ آئے اور ایک دن میں دوسری مرتبہ پاکستان مخالف بیان دیتے ہوئے کہا ہے کہ پاکستان پیسے لینے کے باوجود ہمارے لیے کام نہیں کرتا جس کی واضح مثال اسامہ بن لادن کیس ہے جبکہ افغانستان ایک اور مثال بن رہا ہے ۔ ڈونلڈ ٹرمپ نے سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر جاری اپنی نئی ٹویٹس میں پاکستان پر اسامہ بن لادن کو پناہ دینے کا بے بنیاد الزام عائد کرتے ہوئے کہا ہے کہ اربوں ڈالرز لینے کے باوجود پاکستان نے امریکہ کو اسامہ کی موجودگی کا نہیں بتایا ۔ اسامہ بن لادن کو پہلے ہی پکڑا جانا چاہیے تھا ۔ میں نے ورلڈ ٹریڈ سینٹر پر حملے سے پہلے اپنی کتاب میں اسامہ بن لادن کا ذکر بھی کیا تھا ۔

Of course we should have captured Osama Bin Laden long before we did. I pointed him out in my book just BEFORE the attack on the World Trade Center. President Clinton famously missed his shot. We paid Pakistan Billions of Dollars & they never told us he was living there. Fools!..
— Donald J. Trump (@realDonaldTrump) November 19, 2018

انہوں نے اپنی ٹویٹ میں کہا اب پاکستان کو مزید اربوں ڈالر نہیں دیں گے کیونکہ پاکستان نے ہم نے رقم لے کر بدلے میں کچھ نہیں کیا، اسامہ بن لادن اس کی بڑی مثال ہے جبکہ افغانستان ایک اور مثال بن رہا ہے ۔ پاکستان ان کئی ممالک میں سے ایک ہے جس نے امریکہ سے لیا مگر بدلے میں کچھ نہیں دیا ۔ ہم نے پاکستان کو اربوں ڈالر دئیے مگر اس نے اسامہ بن لادن کی موجودگی سے متعلق ہمیں نہیں بتایا ۔ واضح رہے کہ انہوں نے اس سے قبل آج ہی پاکستان مخالف بیان جاری کرتے ہوئے پاکستان کی دہشت گردی کے خلاف قربانیاں یکسر نظر انداز کر دیں اور کہا کہ پاکستان نے اسامہ بن لادن کو پناہ دی ، پاکستانی حکام اسامہ بن لادن کی موجودگی کے بارے میں جانتے تھے ۔ امریکی صدر نے کہا کہ ہم پاکستان کو سالانہ 1.3 ارب ڈالر دیتے رہے لیکن پاکستان ہمارے لئے کچھ نہیں کررہا تھا ، اس لئے امداد بند کردی ۔

….We no longer pay Pakistan the $Billions because they would take our money and do nothing for us, Bin Laden being a prime example, Afghanistan being another. They were just one of many countries that take from the United States without giving anything in return. That’s ENDING!
— Donald J. Trump (@realDonaldTrump) November 19, 2018

ٹرمپ نے پاکستان کے امداد معطل کرنے کے اپنے فیصلے کا دفاع کرتے ہوئے کہا کہ تم جانتے ہوکہ وہ پاکستان میں رہ رہا تھا اور پاکستانی حکام اس کی موجود گی سے بخوبی آگاہ تھے ۔ ٹرمپ نے یہ بات القاعدہ کے سربراہ اسامہ بن لادن اور ایبٹ آباد میں ان کے کمپاﺅنڈ کی موجودگی کا حوالے دیتے ہوئے کی ۔ وزیر اعظم عمران خان نے ٹرمپ کی ہرزہ سرائی کے جواب میں امریکی صدر کو آئینہ دکھایا اور اپنے جواب میں کہا کہ ”مسٹر ٹرمپ کی تقریر کے بعد ریکارڈ درست کرنے کی ضرورت ہے ۔ سب سے پہلے تو کوئی پاکستانی نائن الیون میں ملوث نہیں تھا لیکن پاکستان نے امریکہ کی دہشت گردی کے خلاف جنگ میں حصہ لیا ۔ دوسری بات ، دہشت گردی کے خلاف اس جنگ میں پاکستان نے 75 ہزار جانوں کی قربانیاں دیں جبکہ اسے 123 ارب ڈالر کا نقصان اٹھانا پڑا ، اس کے مقابلے میں امریکی امداد انتہائی معمولی یعنی صرف 20 ارب ڈالر تھی “ ۔

Trump’s false assertions add insult to the injury Pak has suffered in US WoT in terms of lives lost & destabilised & economic costs. He needs to be informed abt historical facts. Pak has suffered enough fighting US’s war. Now we will do what is best for our people & our interests
— Imran Khan (@ImranKhanPTI) November 19, 2018

The post ڈونلڈ ٹرمپ کو لگی آگ بجھ نہ سکی ، ایک ہی دن میں دوسری بار پاکستان پر لفظی گولہ باری appeared first on Urdu News.