کراچی(ویب ڈیسک) اسٹیٹ بینک آف پاکستان کا کہنا ہے کہ پاکستان کو متحدہ عرب امارات سے مزید 1 ارب ڈالر موصول ہوگئے۔ڈان اخبار کی رپورٹ کے مطابق یو اے ای کی جانب سے وعدہ کیے گئے 3 ارب ڈالر کی یہ دوسری قسط تھی۔اسٹیٹ بینک آف پاکستان نے 9 مارچ کو رپورٹ کیا تھا کہ انہوں نے ابوظہبی فنڈ برائے ترقیاتی امور (اے ڈی ایف ڈی) سے 2 ارب
ڈالر کا معاہدہ کیا ہے جو ان کے اکاؤنٹ میں رکھے جائیں گے۔پاکستان کو اے ڈی ایف ڈی معاہدے کے تحت 1 ارب ڈالر کی پہلی قسط پہلے ہی، جنوری کے مہینے میں موصول ہوچکی ہے۔اسٹیٹ بینک اور ابوظہبی فنڈ برائے ترقیاتی امور کے ڈائریکٹر جنرل کے درمیان 22 جنوری کومعاہدہ طے پایا تھا۔خیال رہے کہ یہ وزیراعظم عمران خان کے یو اے ای کے دورے کے بعد ملک کے زرمبادلہ کے ذخائر میں بہتری کے لیے متحدہ عرب امارات کی طرف سے اعلان کردہ 3 ارب ڈالر کی یہ دوسری قسط ہے۔گزشتہ سال دسمبر کے مہینے میں متحدہ عرب امارات نے اسٹیٹ بینک میں 3 ارب امریکی ڈالر جمع کروانے کا اعلان کیا تھا۔ابوظہبی فنڈز برائے ترقیاتی امور کی جانب سے کہا گیا تھا کہ وہ یہ رقم پاکستان کے مرکزی بینک میں غیر ملکی ذرمبادلہ کے ذخائر کو بڑھانے کے لیے ڈال رہے ہیں۔اماراتی نیوز ایجنسی کا کہنا تھا کہ یو اے ای کی جانب سے پاکستان کی مانیٹری پالیسی میں مدد دونوں ممالک اور ان کے عوام کے درمیان تاریخی تعلقات کی بنیاد پر کی جارہی ہے۔دونوں ممالک نے تمام شعبہ جات میں دوطرفہ تعلقات کو مزید بہتر کرنے کی خواہش کا بھی اظہار کیا تھا۔
ایس بی پی کو موصول ہونے والی رقم تقریباً 4 کھرب 16 ارب روپے سے زائد ہے جو صحت، توانائی، تعلیم اور روڈ انفراسٹرکچر کے 8 جاری منصوبوں پر خرچ کی جائے گی۔
The post پاکستان کو4کھرب 16ارب روپے دینے کے پیچھے اس ملک کامقصدکیاہے،اصل وجوہات سامنے آگئیں appeared first on Urdu News.