نیوزی لینڈ (نیوز ڈیسک) نیوزی لینڈ کے شہر کرائسٹ چرچ کی مساجدپرسفید فام انہتاپسندوں کے حملے 40سے زائد افراد جان سے ہاتھ دھوبیٹھے ہیں جن میں خواتین اور بچے بھی شامل ہیں. حملہ آوروں نے خودکار میشن گنوں سے اس وقت اندھادھند فائرنگ کردی جب مساجد میں جمعہ کی نماز اداکی جارہی تھی. اس حوالے سے میڈیا رپورٹس میں بتایا گیا ہے کہ نیوزی لینڈ میں پاکستانی ہائی کمشنر عبد المالک نے بتایا ہے کہ اطلاعات ہیں کہ حملے میں کئی افراد شہید ہوئے ۔انہوں نے مزید کہا کہ پاکستانی کمیونیٹی سے رابطے میں ہیں۔حملے میں کسی پاکستانی کے متاثر ہونے سے متعلق اطلاع نہیں ہے۔پاکستانی ہائی کمشنر نے کہا کہ پولیس نے علاقے کا محاصرہ کیا ہوا ہے۔رابطے نہیں ہو پا رہے، جیسے ہی کوئی اطلاع ملی ہم دفتر خارجہ سے رابطہ کریں گے۔تاہم اب میڈیا رپورٹس میں بتایا گیا ہے کہ نیوزی لینڈ میں دہشت گردی کا واقعہ پیش آیا تھا جس کے بعد 5 پاکستانیوں کی گمشدگی کی اطلاعات موصول ہوئی ہیں۔گم ہونے والوں میں 36 سالہ سہیل شاہد اور 26 سالہ عریب احمد شامل ہیں۔
اس کے علاوہ 34 سالہ جہانند علی،21 سالہ طلحہ نعیم اور محمد زاہد شامل ہیں۔پاکستانی ہائی کمیشن کے حکام مذکورہ افراد کے خاندان کے ساتھ رابطے میں ہیں۔گمشدہ پاکستانیوں کی مختلف اسپتالوں میں تلاش جاری ہے۔جب کہ حملہ آور سے متعلق اب تک موصول ہونے والی اطلاعات کے مطابق آسڑیلوی شہری ہے جس کی شناخت برینٹن ٹیرینٹ سے نام سے ہوئی ہے۔حملہ آورفوجی وردی میں ملبوس تھا۔ جس کی عمر 30 سے 40 سال ہے جبکہ ایک عورت سمیت اس کے4 ساتھی شہر کے دوسرے علاقوں سے گرفتار ہوئے۔ امریکی نشریاتی ادارے کے مطابق ملزم نے اپنے سوشل میڈیا اکاﺅنٹ سے اسلام مخالف مواد کے87 صفحات پوسٹ کیے جن میں لوگوں کو مسلمانوں پر حملوں کے لیے اُکسایا گیا تھا اور اسکے بعد یہ واقعہ پیش آیا ہے جسکی ساری دنیا مذمت کر رہی ہے جبکہ مسلمان حکمرانوں کی جانب سے بھی شدید الفاظ میں اس واقعے کی مذمت کی جارہی ہے۔
The post وہی ہوا جس کا ڈر تھا ۔۔۔۔ نیوزی لینڈ میں مساجد پر دہشتگردانہ حملہ ، پاکستانیوں کی بڑی تعداد بارے تشویشناک خبر آگئی appeared first on Urdu News.