اسلام آباد (نیوز ڈیسک) مسلم لیگ ن میں نواز شریف کے بیانیے کے خلاف فارورڈ بلاک بننا شروع ہوگیا ہے جس کا ایک اجلاس بھی خفیہ طور پر ہوچکا ہے لیکن پارٹی قیادت نے ارکان اسمبلی کو فارورڈ بلاک میں جانے سے روکنے کے لیے کوششیں تیز کر دیں ہیں اور جامعہ حکمت عملی ترتیب دے دی ہے
تفصیلات کے مطابق عام انتخابات 2018ئ میں ناکامی اور پارٹی قائد کے بیانیے کے خلاف مسلم لیگ ن کے اندر ہی ایک فارورڈ بلاک بننا شروع ہو گیا ہے۔
فارورڈ بلاک بننے کی وجہ سے پارٹی قیادت بھی خاصی پریشان ہو گئی ہے جس کی وجہ مسلم لیگ ن کی قیادت نے پارٹی کے ارکان اسمبلی کو فارورڈ بلاک میں شامل ہونے سے روکنے کے لیے کوششیں تیز کر دی ہیں۔لیگی قیادت کی جانب سے ارکان اسمبلی کو جھوٹے دلاسے دئے جا رہے ہیں۔
ن لیگ کے کئی اجلاسوں میں بھی ارکان اسمبلی کے فارورڈ بلاک میں جانے سے متعلق بات کی گئی جس کے بعد ایک منصوبہ بندی کے تحت اہم رہنماؤں نے یہ تقاریر شروع کردی ہیں کہ پنجاب میں مسلم لیگ ن کی ہی حکومت بنے گی، آزاد ارکان اس طرف گئے ضرور ہیں مگر وہ الیکشن کے وقت کٴْھل کر ہمارے ساتھ ہو جائیں گے۔
دوسری جانب ذرائع کے مطابق ن لیگ کے حالیہ ہونے والے اجلاس میں ن لیگ کی قیادت کو رپورٹ دی گئی کہ اگر پنجاب میں ن لیگ کی حکومت نہیں بنتی تو ان کے آدھے سے زیادہ ارکان اسمبلی پارٹی کو خیرباد کہہ دیں گے۔