لاہور(نیوز ڈیسک) سینئر صحافی شاہد مسعود نے انکشاف کیا ہے کہ جنوری 2018 میں جب نواز شریف کو نااہل قرار دیا جا چکا تھا اور شاہد خاقان عباسی پاکستان کے وزیراعظم تھے اور بیگم کلثوم نواز ابھی زندہ تھیں، تب مشرقِ وسطیٰ کے ایک بڑے ملک سے ایک خصوصی طیارہ بھیجا گیا جو لاہورمیں لینڈ کیا۔
اس طیارے میں شہباز شریف سوار ہوئے اور اس عرب ملک چلے گئے۔ شاہد مسعود نے بتایا ہے کہ جب شہباز شریف وہاں پہنچے تو میاں نواز شریف وہاں موجود تھے اور ان کے صاحبزادے حسین نواز بھی موجود تھے۔ تب اس عرب ملک کے ایک بڑے شہزادے نے آکر ان سے ملاقات کی اور اس شہزادے نے کہا کہ ہم پاکستان میں استحکام چاہتے ہیں، ہم پاکستان میں انتشار نہیں چاہتے، جو کچھ آپ کر رہے ہیں اس سے پاکستان کے معاملات خراب ہوتے جا رہے ہیں۔
شہزادے نے سارے معاملات طے کیے اور نوازشریف نے سیاست سے الگ ہو کر پارٹی کی صدارت شہباز شریف کو دے دی۔ شاہد مسعود کے مطابق اس وقت جب میاں نواز شریف، شہباز شریف اور حسن نواز وپس آنے لگے تو عرب شہزادے کے نمبردو نے حسین نواز کے کان میں آہستہ سے کہا کہ اپنی بہن مریم نواز سے کہیں کہ وہ ٹویٹ کم کیا کریں،
ان کی ٹویٹ کی وجہ سے انتشار پھیلتا ہے۔شاہد مسعود کے مطابق اس سے اگلی صبح ن لیگ نے انتشار پھیلانے والے معاملات روک دیے، مریم نواز کی ٹویٹس بھی بہت کم ہو گئیں اور ’خلائی مخلوق‘ کا جو واویلا کیا جا رہا تھا وہ بھی ختم ہو گیا۔
The post مریم سے کہیں کہ وہ ٹویٹ کم کیا کریں ، عرب شہزادے کا حسین نواز کو پیغام appeared first on Urdu News.