لاہورہائیکورٹ میں خادم حسین رضوی اور فضل الرحمان کے خلاف غداری کی کاروائی کیلئے درخواست سماعت کیلئے منظور کرلی گئی

لاہور ہائیکورٹ نے تحریک لبیک کے سربراہ خادم حسین رضوی اور جے یو آئی کے سربراہ مولانا فضل الرحمان کے خلاف ریاست کے خلاف بیان دینے اور عوام کوتشدد پر اکسانے کے جرم میں غداری کی کارروائی کے لئے دائر درخواست سماعت کے لئے منظور کرلی ۔ ایک نجی نیوز چینل کے مطابق لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس علی باقر نجفی شہری شبیراللہ کی درخواست پر 12 نومبر کو سماعت کریں گے ، درخواست گزار کی جانب سے موقف اختیار کیا گیا ہے کہ سپریم کورٹ کی جانب سے آسیہ مسیح کی رہائی کے فیصلے کے بعد تحریک لبیک کے سربراہ خادم حسین رضوی کی جانب سے ریاست اور مسلح افواج کے خلاف بیانات دیئے گئے اور لوگوں کو تشدد پر اکسایا گیا ۔ تین دن تک ملک میں امن وامان کی صورتحال کو خراب کیا گیا اور آئین کو معطل کرنے کی کوشش کی گئی ۔
ایڈووکیٹ سید محمد اعلیٰ کی وساطت سے دائر درخواست میں پنجاب حکومت، سیکرٹری داخلہ سمیت دیگر کو فریق بناتے ہوئے موقف اختیار کیا گیا ہے کہ عدالتی فیصلے پر رد عمل ظاہر کرتے ہوئے خادم حسین رضوی کی ایما پر سڑکیں زبردستی بند کی گئیں اورنجی املاک کو نقصان پہنچایا گیا ۔ درخواست گزار نے کہا کہ خادم حسین رضوی اور مولانا فضل الرحمان نے ریاست مخالف تقاریر کیں ، درخواست میں عدالت سے استدعا کی گئی ہے عدالت خادم حسین رضوی اور مولانا فضل الرحمان کے خلاف غداری کا مقدمہ درج کرنے اور شہریوں کی املاک کو ہونے والے نقصان کے حوالے سے حکومت کو پالیسی وضع کرنے کا حکم دیا جائے ۔
The post لاہورہائیکورٹ میں خادم حسین رضوی اور فضل الرحمان کے خلاف غداری کی کاروائی کیلئے درخواست سماعت کیلئے منظور کرلی گئی appeared first on Urdu News.