اسلام آباد( مانیٹرنگ ڈیسک) وزیر اعظم پاکستان عمران خان نے سعودی ولی عہد سے تحفے میں ملنے والی گھڑی جب قومی خزانے میں جمع کروائی تو پورے ملک میں دھوم مچ گئی لیکن پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ ن کے ادوار میں ہونے والے بیرون ممالک دوروں کے دوران جو تحفے تحائف ملتے تھے ان کے ساتھ کیا کیا جاتا تھا؟ ایسی تفصیلات سامنے آگئیں کہ پوری قوم کا سر شرم سے جھک گیا ۔
تفصیلات کے مطابق دورہ سعودی عرب کے دوران سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان نے وزیر اعظم پاکستان عمران خان کو ایک قیمتی گھڑی تحفے میں دی۔ گھڑی شو پارڈ کمپنی کی تھی جسکی قیمت پاکستانی ایک کروڑ اور پینسٹھ لاکھ کے لگ بھگ تھی۔ عمران خان نے حب الوطنی کی مثال قائم کرتے ہوئے سعودی ولی عہد سے ملنے والی گھڑی قومی خزانے میں جمع کروا دی پیپلز پارٹی کے دورِ حکومت میں جب ترک صدر اور انکی اہلیہ پاکستان آئے تھے۔
ترک صدر کی اہلیہ نے پاکستان میں خطاب کرتے ہوئے 1943ء کے دور کو یاد کیا اور برصغیر کی خواتین کی جانب سے دیئے جانے والے زیوارات کو یاد کرتے ہوئے اپنے گلے کا ہار اُتار کر اس وقت کے وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی کو دیا اور کہا کہ انکے اس ہار سے زلززلہ زدگان کی مدد کی جائے۔ لیکن یوسف رضا گیلانی نے وہ ہار قومی خزانے یا زلزلہ متاثرین کے لیے استعمال میں لانے کی بجائے اپنی اہلیہ کو بطور تحفہ دے دیا ۔
نواز شریف کی دور اقتدار میں امریکہ کے سابق صدر باراک اوبامہ کی جانب سے سابق وزیر اعظم پاکستان میاں نواز شریف کی صاحبزادی مریم نواز کو پاکستان میں لڑکیوں کی تعلیم کے لیے 70 ملین ڈالرز دیئے گئے جس انہوں نے ہڑپ کر لیا۔ جس کے بارے میں سندھ ہائی کورٹ میں درخواست دائر کی گئی جس میں مؤقف اکتیار کیا گیا کہ سابق امریکی صدر براک اوباما کی اہلیہ نے نواز شریف کی صاحبزادی مریم نواز کو 70 ملین ڈالرز دئیے جو کہ 2 لاکھ پاکستانی بچوں کی تعلیم پر خرچ کیے جانے تھے۔ لیکن اس خطیر رقم کا ابھی تک کوئی حساب نہیں دیا گیا ہے۔
The post عمران خان نے اپنی تحفے میں ملنے والی گھڑی قومی خزانے میں جمع کرا دی مگر پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ ن کے دور میں ملنے والے تحفے کہاں گئے؟ appeared first on Urdu News.