انقرہ (ویب ڈیسک)ترکی میں 2016 میں آنے والے انقلاب کے حوالے سے تہلکہ خیز انکشاف ہوا ہے ۔ تفصیلات کے مطابق 2016 میں انقلاب کی ناکام کوشش کے نتیجے میں صدر رجب طیب ایردوآن ایک مطلق العنان حکمران کے طور پر سامنے آئے مگر اس واقعہ9 کے اڑھائی برس بعد آج 2019 میں ایک ایسا ثبوت سامنے آیا ہے جو یورپی یونین کے ان شکوک کی تصدیق کرتا ہے کہ صدر ایردوآن کو پہلے ہی یہ معلوم تھا کہ کیا ہونے جا رہا ہے مگر انہوں نے وہ سب کچھ ہونے دیا تا کہ یک شخصی حکمرانی کے نظام کی بنیاد رکھی جا سکے۔ اس بات کا انکشاف انگریزی ویب سائٹ کی جانب سے کیا گیا ۔ یہ ثبوت ایک دستاویز کی صورت میں سامنے آیا جو ترکی کے پراسیکیوٹر نے 16 جولائی 2016 کو تحریر کی تھی، اس دستاویز کو تحقیقاتی صحافی احمد دونمیز نے حاصل کر لیا جو اس وقت سویڈن میں جلاوطنی کی زندگی گزار رہے ہیں۔
یہ دستاویز ان واقعات کا تفصیلی ریکارڈ ہے جو انقلاب والے روز صبح پانچ بجے اور سات بجے رونما ہوئے۔ مثلا دستاویز میں بتایا گیا ہے کہ ترکی کی فضائیہ کے انقلابی عناصر نے پارلیمنٹ اور صدارتی محل کے باغ کو بم باری کا نشانہ بنایا۔ ایسا واقعتا ہوا بھی تھا تاہم حیرت انگیز بات یہ ہے کہ واقعات کی تفصیلات مرتب کرنے والے پراسیکیوٹر سردار کوسکون نے اپنی دستاویز پر اس طرح سے تاریخ ڈالی ہے گویا کہ وہ رات ایک بجے یعنی کہ کسی بھی واقعے کے رونما ہونے سے چار گھنٹے قبل لکھی جا رہی ہو۔ویب سائٹ کے مطابق کوسکون نے ابتدا میں اس امر پر خاموشی اختیار کی۔ بعد ازاں حکومت کے حامی ایک صحافی کو دیے گئے انٹرویو میں انہوں نے دستاویز کی تصدیق کی مگر ساتھ یہ بھی بتایا کہ وقت تحریر کرنے میں ان سے غلطی ہو گئی اور وہ اس کو بدلنا بھول گئے۔
The post سال 2019 کا سب سے بڑا تہلکہ : 2016 میں ترکی میں آنے والا انقلاب تو ایک ڈرامہ نکلا ، مگر کیسے؟ مصدقہ ثبوت اس خبر میں ملاحظہ کریں appeared first on Urdu News.