لاہور(آئی این پی)سپریم کورٹ آف پاکستان نے زیرزمین پانی نکال کرفروخت کرنیوالی کمپنیوں کے مالکان کو آج صبح9 بجے سپریم کورٹ طلب کر لیا، چیف جسٹس پاکستان نے اعتزاز احسن کی 30 نومبر تک سماعت ملتوی کرنے کی استدعا مسترد کرتے ہوئے کہا کہ آپ کیا چاہتے ہیں کہ میں سمجھوتہ کرکے برطانیہ کے دورے پر چلا جائوں ،کیا وہ لوگ معافی کے قابل ہیں جنوں نے اس قوم کو گندہ پانی پلایا۔
تفصیلات کے مطابق چیف جسٹس پاکستان کی سربراہی میں بنچ نے زیرزمین پانی نکال کر فروخت کرنے والے کمپنیوں کیخلاف ازخودنوٹس کی سماعت کی،صاف پانی کمپنی کے وکیل اعتزاراحسن نے مقدمے کی سماعت 30 نومبر تک ملتوی کرنے کی استدعاکرتے ہوئے کہا کہ آپ برطانیہ کے دورے کے بعد آکر یہ کیس سن لیں ۔چیف جسٹس نے اعتزاز احسن کی استدعا مسترد کرتے ہوئے کہا کہ آپ کیا چاہتے ہیں کہ میں سمجھوتہ کرکے برطانیہ کے دورے پر چلا جائوں کیا۔
وہ لوگ معافی کے قابل ہیں جنہوں نے اس قوم کو گندہ پانی پلایا،چیف جسٹس نے کہا کہ ڈی جی فوڈ اتھارٹی بتائیں غیر معیاری فروخت پرکیا فوجداری کارروائی بنتی ہے عدالت نے 11 کمپنیوں کے مالکان آج صبح 9 بجے سپریم کورٹ طلب کر لیا،چیف جسٹس نے کہا کہ آج پیش نہ ہونے پر کمپنیوں کے مالکان کے نام ای سی ایل میں ڈالوں گا۔
The post آپ کیا چاہتے ہیں میں برطانیہ چلا جائوں؟ چیف جسٹس نے بھری عدالت میں اعتزاز احسن کو کیا کہہ ڈالا چونکادینے والی خبر appeared first on Urdu News.