لاہور (اردو نیوز) پاکستان کو سفارتی محاذ پر زبردست کامیابی مل گئی، بھارتی وزیر خارجہ سشما سوراج کی موجودگی میں او آئی سی نے کشمیریوں کی حمایت میں قرارداد منظور کرلی،قرارداد میں مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں اور بھارتی دراندازی کی مذمت جبکہ مسئلہ کشمیر کا حل ناگزیر قرار دیا گیا۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق پاکستان نے آرگنائزیشن آف اسلامی کوآپریشن (اوآئی سی ) کے اجلاس کا بائیکاٹ کیا لیکن اس کے باوجود مسئلہ کشمیر کے حل کیلئے قرارداد کو منظور کرلیا گیا ہے۔
اس کو دنیا میں پاکستان کی سفارتی محاذ پر زبردست کامیابی قرار دیا جا رہا ہے۔بتایا گیا ہے کہ اوآئی سی کا 46ویں دوروزہ اجلاس ہوا۔جس میں اوآئی سی کے رکن ممالک نے شرکت کی۔
تاہم پاکستان نے پاک بھارت کشیدگی کے باعث بھارتی وزیرخارجہ کی شرکت پر بطور احتجاج اوآئی سی اجلاس کا بائیکاٹ کیا اور وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے شرکت نہیں کی۔لیکن اس کے باوجود پاکستان کے امن کے اقدامات کی تعریف کی گئی اور کشمیریوں کی حمایت میں قرارداد منظور کی گئی۔
قرارداد میں کشمیری عوام کی حمایت کا عزم کیا گیا اور مسئلہ کشمیر کا حل ناگزیرقرار دیا گیا۔قرارداد میں واضح کیا گیا کہ پاکستان اور بھارت کے درمیان جموں ومقبوضہ کشمیر بنیادی تنازع ہے۔ قرارداد میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں پربھی تشویش کا اظہار کیا گیا، جبکہ کشمیریوں پر ظلم اور بھارتی دراندازی کی مذمت بھی کی گئی۔ دوسری جانب وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی کا کہنا ہے کہ ہم نے او آئی سی اجلاس کا متفقہ طور پربائیکاٹ کیا۔
بائیکاٹ اس لیے کیا کہ اگر حکومت اوآئی سی اجلاس میں جاتی تو اپوزیشن اور حکومت کے مشترکہ اتحاد کے پیغام میں خلل پڑ جانا تھا۔قائد حزب اختلاف شہباز شریف نے بھی اپنی تقریر میں اوآئی سی کا حوالہ دیا۔ اجلاس28 فروری کوہوا، میں نے 26 فروری کو خط لکھا تھا۔
The post او آئی سی میں پاکستان کی سفارتی کامیابی، کشمیر کے حق میں قرارداد منظور appeared first on Urdu News.